Sunday, February 20, 2011

جاوید نامہ ۴:

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
تمہید زمینی
حضرت مولانا روم کی روح ظاہر ہوتی ہے اور اسرارِ معراج کی شرح بیان کرتی ہے

عشقِ شہرِ جنوں ہے بے پروا                       شہر میں اک چراغ جلتا تھا
دشت و کوہ و دمن میں شعلہ تھا                 خلوتِ جاں میں خوب بھڑکا تھا
محرمِ راز جب کوئی نہ ملا                         میں کنارے ندی کے جا پہنچا
تھا غروب آفتاب کا منظر                           ساحلِ جوئے آب کا منظر
کور ذوقوں کو بھی نظر دیدے                      شب کو رنگ اور بوئے سحر دیدے
دل سے باتیں نکل نکل سی گئیں                 آرزوئیں مچل مچل سی گئیں
مختصر زندگی ، نصیب مرا                        جاودانی نہیں، نصیب مرا
میں بھی بے اختیار گانے لگا                       بے محابا غزل سنانے لگا


غزل

حضرت مولانا روم
ترجمہ: محمد خلیل الرحمٰن
لب کھول دے کہ ہے لبِ شیریں کی آرزو                 پردا اٹھا کہ ہے گلِ سیمیں کی آرزو
اک ہاتھ میں ہو جام تو کاندھے پہ زلفِ یار               میداں میں مستِ رقص ہوں ، یہ میری آرزو
کہتے ہو ناز سے کہ نکل ، اب نہ تنگ کر                 مت چھیڑ، مجھکو ہے یہی سننے کی آرزو
اے عقل! شوق میں ہوئی مجنوں یہی بہت             اے عشق! تیرے نالوں کے سننے کی آرزو
سیلِ رواں بھلا ہو ترا، مجھکو تو فقط                     ماہی کی مثل دریا میں جانے کی آرزو
جور و ستم ملول مجھے کرگئے ترے                       فرعون! ہے مجھے یدِ بیضا, کی آرزو
کل شیخ ساتھ سے مرے گزرا کہ ‘‘ اب مجھے           ہے شہرِ ناز میں کسی انساں کی آرزو
بیزار ہوں میں مردہ دلوں سے کہ اب مجھے               شیرِ خدا کی، رستمِ دوراں کی آرزو
میں نے کہا کہ میں بھی تو جویا ہوں اس کا یاں          کہنے لگا کہ ہے اسی انساں کی آرزو


شام ہوتے ہی سوگئیں لہریں                           اور ظلمت میں کھو گئیں لہریں
شام نے پھر چرائی ایک کرن                            اک ستارہ جو شب کی تھا دلہن
روحِ رومی یوں سامنے آئی                                جھلک اپنی یوں مجھکو دکھلائی
چہرہ سورج کی طرح تھا روشن                         تھی جونی پہ پیری سایہ فگن
نورِ سرمد سےتن منور تھا                                 سرمدی نور کا وہ پیکر تھا
لب پہ ان کے وجود کے تھے راز                         کھولے دیتی تھی راز یہ آواز
مثلِ آئینہ ان کے لفظ عیاں                                 سوزِ دل جن میں ہوگیا پنہاں
(دیکھ کر ان کو میں بھی کھِل اٹھّا                    اورر پھر ان سے یہ سوال کیا)
کیا ہے موجود اور نا موجود؟                            کیا ہے محمود اور نا محمود؟
بولے موجود چاہتا ہے نمود                               جس کے انداز سے عیاں ہو وجود
زیست مثلِ عروس سجتی ہے                            نظرِ شاہد میں خود ہی جچتی ہے
حق نے محفل بھی اک سجائی تھی                   اپنے ہونے پہ داد چاہی تھی
( جس کو روزِ الست کہتے ہیں                         ہم جسے اب بھی یاد کرتے ہیں)
زندگی، موت و جانکنی کے لیے                         تین شاہد تلاش کر لیجے
پہلا شاہد ہے خود شعور اپنا                            خود کو دیکے ہے خود ہی نور اپنا

کیا ہے معراج؟ آرزوئے حبیب                             امتحان اپنا روبروئے حبیب
ایسی شاہد کی جنبشِ ابرو                               جیسے ہو پھول کے لیے خوشبو
اس کی محفل میں کس کی تاب و مجال                       ہاں بجز اھلِ مرتبہ و کمال
ذرہ گر ہے، چمک کو ہاتھ میں رکھ                    بلکہ اپنی گرہ میں تھام کے رکھ
اس پہ کچھ اور تاب اپنی بڑھا                         سامنے مہر کے اسے چمکا

6 comments:

  1. It's always nice when you can not only be informed, but also get knowledge, from these type of blog, nice entry. Thanks

    Web Designing

    ReplyDelete
  2. I always learn something new from your post!Great article. I wish I could write so well.


    UK Education Consultants

    ReplyDelete
  3. This is not the first of your posts I've read, and you never cease to amaze me. Thank you, and I look forward to reading more.
    Boundless

    ReplyDelete
  4. It’s great to see good information being shared and also to see fresh, creative
    ideas that have never been done before.

    Cctv Karachi
    CCTV CAMERA IN PAKISTAN
    CCTV CAMERA KARACHI
    EVERFOCUS KARACHI
    EVERFOCUS PAKISTAN
    Happy Times

    ReplyDelete